Professor Abdullah Bhatti

دعا بیٹی

دعا بیٹی آج اپنے خاوند اور دو بچوں کے ساتھ میرے پاس آئی ہوئی تھی میں نے ملاقات کی اور کہا بیٹی سر پر پیار لو اور جائو تو وہ بڑے لاج اور احترام بھرے پیار سے بولی بابا جان میں نے جلدی واپس نہیں جانا میں تو آپ کے پاس وقت گزارنے آتی ہوں مجھے خود سے دور نہ کیا کریں میرے والد صاحب کے جانے کے بعد اب میں آپ کو ہی اپنا والد اور بابا جان مانتی ہوں اِس لیے ایسی بے مروتی میرے ساتھ نہ کیا کریں میں آپ کی بیٹی ہوں والدین اپنی بچیوں کے ساتھ اسطرح نہیں کرتے وہ پیار بھرے شکوے کرنے لگی تو میں بولا یاد کرو وہ دن جب تم بار بار خود کشی کی کو شش کر نے کی کو شش کرتی تھی روحانی لٹیروں کی لوٹ مار کے بعد میرے پاس کس طرح اجڑ کر آئی تھی تو اُس کی بڑی بڑی آنکھوں سے ساون بھادوں بہنے لگا اور وہ بولی بابا جان خدا کے لیے مجھے وہ دن یاد نہ کرائیں اور نہ ہی میں اُن تلخ یادوں کو اب یاد کرنا چاہتی ہوں پلیز وہ اپنے چار سالہ بچے کے پیچھے دوڑتی ہوئی مُجھ سے دور جا کر بینچ پر بیٹھ گئی میں خدا کی قدرت پر شاکر اُس کو اور اُس کے بچوں کو دیکھ رہا تھا اور پانچ سال پہلے والی دعا کو یاد کر رہا تھا خوف اور دہشت میں بیٹی دعا بیٹی اپنی خالہ کے ہمراہ میرے پاس آئی تھی پہلے دن جب آئی تو حالت خراب مہینوں سے نہائی نہیں تھی پھٹے پرانے کپڑوں میں ملبوس آنکھوں اور چہرے پر سیاہ حلقے پڑے ہوئے تھے وہ ڈری سہمی میرے سامنے آکر بیٹھ گئی خالہ نے آکر بتایا کہ یہ میری بہن کی بیٹی ہے والدین وفات پاگئے ہیں اب یہ میری بیٹی بن کر میرے گھر پر رہتی ہے چھ ماہ سے اِس پر کوئی جِن آسیب سوار ہے اِس کو دورے پڑتے ہیں یہ چیخیں دھاڑیں مارتی ہے ساری رات پاگلوں کی طرح جاگتی اور چلتی پھرتی ہے ذہنی توازن بہت خراب ہو چکا ہے پاگل پن کے دورے پڑتے ہیں ہم اِس کا علاج ڈاکٹروں حکیموں سے کرا کرا کر تھک چکے ہیں ڈاکٹروں ہسپتالوں سے مایوس ہو کر پھر بابوں ملنگوں بزرگوں کے پاس جانا شروع کیا لیکن ہماری بد قسمتی کہ نہ تو ڈاکٹروں نے اِس کا علاج کیا نہ حکیموں کو اِس کی سمجھ آئی جب ڈاکٹروں حکیموں سے مایوس ہو کر روحانی بابوں کے پاس جانا شروع کیا انہوں نے تو خوفناک کہانیاں سنا سنا کر ہمیں پاگل کر دیا ڈرا دیا کوئی جنات کوئی چڑیل دیو بھوت پتہ نہیں وہ کیا کیا کہتے ہیں پیسوں کے ساتھ بکروں مرغوں کے صدقے کڑاھیاں اور پیسے دے دے کر خود کو کنگال کر لیا ہے لیکن مرض بڑھتا گیا جوں جوں دعا کی ہر گزرتے دن کے ساتھ اِس کی بیماری پاگل پن جناتی دورے بڑھتے چلے گئے میں نے پاکستان کا شاید ہی کوئی کونہ مزار یا روحانی آستانہ چھوڑا ہو جہاں میں اِس کو لے کر نہیں گئی اب کسی نے آپ کا بتا یا تو اِس کو لے کر آپ کے پاس آگئی ہوں آپ اِس پر مسلط جو بھی جن آسیب ہے اُس کو اتار دیں تاکہ یہ نارمل زندگی گزار سکے اگر یہ آپ سے بھی ٹھیک نہ ہوئی تو میں اِس کو پاگل خانے جمع کرادوں گی کیونکہ اب میںمزید اِس کے علاج کے لیے اور دھکے نہیں کھا سکتی آپ پیر صاحب خدا کے لیے میری مدد کریں میری بیٹی دعا کو ٹھیک کر دیں آپ کا جو بھی نذرانہ ہدیہ خر چہ وغیرہ ہے میں آپ کو دوگنا دوں گی لیکن اِس کو خدا کے لیے ٹھیک کر دیں خالہ بیچاری دیر تک وہ داستان الم ناک سناتی رہی وہ تلخ تجربات جو اُس کو اِس کے علاج کے دوران ہوئے جب وہ خوب بول چکی تو میں نے دعا بیٹی کی طرف دیکھا تو ایک چیز نمایاں تھی کہ وہ کسی شدید کرب خوف میں لپٹی ہوئی تھی جبکہ خالہ اُس کو آسیبی کیس بنا نے پر تلی ہوئی تھی لیکن دعا کی حالت آنکھوں اور چہرے کے تاثرات کو ئی اور ہی سٹوری سنا رہے تھے یتیم بچی تھی بنا والدین کے بچیوں کے ساتھ جو تلخ واقعات ہو تے ہیں یقینا یہ بچی بھی بے آسرا تھی اِس لیے کسی تلخ خوفناک واقع نے اِس بیچاری کو پاگل کر دیا تھا کوئی خوف تھا جو یہ بیچاری کسی کو بھی نہیں بتا رہی تھی اپنی تسلی کے لیے میں نے بہت سارے سوالات دعا سے اور خالہ سے کئے تو اِس نتیجے پر پہنچ گیا کہ اِس پر کوئی جن آسیب نہیں ہے یہ شدید ڈپریشن خوف کا شکار ہے اِس کی زندگی میں کوئی حادثہ واقع ایسا ہوا ہے جس کی وجہ سے یہ ریزہ ریزہ ہو کر ٹوٹ گئی ہے خوف کا یہ عالم کہ اِس کو اپنا نجات دہندہ بھی نظر نہیں آتا جو اِس کو اِس مشکل سے بچا سکے اب اِس کو بہت زیادہ مدد کی ضرورت تھی میں نے دل ہی دل میں فیصلہ کیا کہ اِس یتیم جوان لڑکی کی مدد ہر صورت کرنی ہے اب میں نے دعا بیٹی کے سر پر شفقت بھرا ہاتھ رکھا اور کہا تم آج سے میری بیٹی ہو میں آپ کا مکمل ساتھ دوں گا تم یقینا صحت یاد ہو جائو گی میں دیر تک اُس کو حوصلہ دیتا رہا لیکن وہ بے یقینی سے میری طرف دیکھتی رہی میرے حوصلہ دینے سے اُس کو دورہ نہ پڑا تو خالہ بولی آپ نے جن قابو کر لیا ہے آج اِس کو پاگلوں والے دورے نہیں پڑے میں نے دعا بیٹی جو بی اے کی طالبہ تھی اپنا موبائل نمبر دیا اور کہا بیٹی تم مُجھ پر پورا بھروسہ کر سکتی ہو پھر میں نے خالہ سے کہا آپ دو دن کے وقفے سے اِس کو پانچ دم کرائیں تاکہ اِس کے جنات بھاگ جائیں اِس طرح دعا بیٹی میرے پاس آتی رہی میں ہر بار اُس سے محبت شفقت سے پیش آتا پانچویں دم تک وہ نارمل ہو چکی تھی اِس دوران میں اِس انتظار میں تھا کہ یہ مُجھ سے رابطہ کر ے مجھے وہ بات حادثہ جس نے اِس مار کر رکھ دیا بتائے پندرہ دن گزر گئے ایک رات میں جاگ رہا تھا کہ ایک نمبر سے بہت سارے میسجز آنے شروع ہو گئے میں نے پڑھے تو پتہ چلا یہ دعا میسج کر رہی ہے بے شمار میسج وہ بار بار ایک ہی بات کر رہی تھی کہ آپ کو اپنے بچوں کو واسطہ خدا کا واسطہ میری مدد کریں پہلے ورنہ میں خو د کشی کر کے اپنی زندگی کا خاتمہ کر لوں گی میں تو خود بھی اسی انتظار میں تھا میں نے جواب دیا ہاں میں تمہاری مدد کروں گا تو اُس بیچاری نے لمبے لمبے میسجز جواب دیا ہاں میں تمہاری مدد کروں گا تو اُس بیچاری نے لمبے لمبے میسجز میں جو بات بتائی اُس نے میرے بھی ہوش اڑا دئیے خلاصہ اِس طرح تھا کہ سر میں جب جوان ہوئی تو بہت خوبصورت تھی میں نے محسوس کیا کہ میرے خالو مجھے سر سے پائوں تک دیکھتے ہیں اُن کی آنکھوں میں مجھے شکاری کی ہوس نظر آئی اور پھر ایک دن انہوں نے مجھے گھر میں اکیلی دیکھ کر پکڑ لیا میرے شور مچانے پر میری عزت بچی ساتھ مجھے دھمکی دی کہ اگر یہ بات تم نے کسی کو بتائی تو میں تم پر الزام لگائوں گا کہ تم بد کرادار ہو میں معصوم بچی ڈر گئی اب اُن کو جب بھی موقع ملتا وہ میرے ساتھ چھیڑ خانی کرتے میرے شور مچانے پر میری عزت بچ جاتی اِس غم نے میرے حوش ذہنی حالت خراب کر دی میری خالہ مجھے ڈاکٹروں کے بعد جب بابوں کے پاس لے گئی تو بابے جن نکالنے کے بہانے میرے جسم پر ہاتھ لگاتے میں بن والدین کے خوف میں ڈھلتی چلی گئی اور پاگل ہو گئی سر آج خالو نے مجھے پکڑا میں نے بڑی مشکل سے عزت بچائی ہے میری مدد کریں اب میں نے خالہ کو بلا کر قسم اٹھا کر ساری بات بتائی اور طریقہ بھی بتایا کس طرح وہ خاوند کو پکڑ سکتی ہے پھر باہر جانے کے بہانے وہ گھر پر رہی خالو کو لگا خالہ جا چکی ہے اِس طرح جب خالو نے دعاپر حملہ کیا تو خالہ نے رنگے ہاتھوں پکڑ لیا اور کہا آج کے بعد اگر تم نے ایسی حرکت کی تو خاندان دنیا کو بتائوں گی اِس کے بعد خالو ڈر گیا خالہ نے اچھا رشتہ دیکھ کر دعاکی شادی کر دی خالو اپنے غم میں مر گیا دعاکو اللہ نے دو بچے دئیے اب یہ خوشحال زندگی گزارہی ہے خاوند بہت پیار کرنے والا ملا ہے جو دعا کا ہر طرح سے خیال رکھتا ہے دعا میری مدد کو آج بھی یاد کر تی ہے اور وہ جب بھی آتی ہے تو خدا کا شکرادا کرتا ہوں کہ کس طرح اللہ نے یتیم بچی کو جنسی درندے سے بچایا ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں