nasir kazmi

تیرا بُھولا ہُوا پیمان ِ وفا

دل دھڑکنے کا سبب یاد آیا
وہ تِری یاد تھی اب یاد آیا

آج مشکل تھا سنبھلنا اے دوست
تو مُصیبت میں عجب یاد آیا

دن گزارا تھا بڑی مشکل سے
پھر ترا وعدہ ء شب یاد آیا

تیرا بُھولا ہُوا پیمان ِ وفا
مَر رہیں گے اگر اب یاد آیا

پھر کئی لوگ نظر سے گزرے
پھر کوئی شہر ِ طرب یاد آیا

حال ِ دل ہم بھی سُناتے لیکن
جب وہ رخصت ہُوا تب یاد آیا

بیٹھ کر سایہ ء گل میں ناصر

ہم بہت روئے وہ جب یاد آیا

ناصر کاظمی

2 تبصرے “تیرا بُھولا ہُوا پیمان ِ وفا

اپنا تبصرہ بھیجیں