Melon

🍈 خربوزہ (Melon) 🍈

🍈 خربوزہ (Melon) 🍈
خربوزے کے مختلف رنگ ہوتے ہیں۔ زیادہ تر زردی مائل ہی ہوتا ہے۔ اس کا ذائقہ پھیکا شیریں ہوتا ہے۔ اس کا مزاج گرم اور تر ہوتا ہے۔ اس کی خوراک بقدر ہضم ہے۔ اس کے کئی فوائد ہیں۔1۔ امام حسن عسکری علیہ السلام فرماتے ہیں: نہار منہ خربوزہ نہیں کھانا چاہئے کیونکہ اس سے فالج کا اندیشہ ہے۔ (بحارالانوار، جلد14)2۔ یہ ہماری روز کی وٹامن اے اور سی کو پورا کرتا ہے۔ اس میں 90 فیصد پانی ہوتا ہے۔ جو معدے کی جلن کو رفع کرتا ہے۔ اس میں شامل منرلز معدے کی تیزابیت کے خاتمے میں معاون ہیں۔3۔ خربوزہ قبض کو دور بھگاتا ہے۔ اور نظام ہاضمہ میں بہتری لاتا ہے۔4۔ خربوزے کا استعمال کمر کے پٹھے مضبوط بناتا ہے۔ اس کا استعمال خواتین کی جلد اور حسن کے نکھار کے لیے بھی فائدہ مند ہے۔5۔ گردہ، مثانہ کی اصلاح کرتا ہے۔ 6۔ یہ پتھری توڑتا ہے۔ گردوں کے درد اور پتھری سے نجات دلانے میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔7۔ خربوزہ پیشاب آور ہوتا ہے۔8۔ پھیپھڑوں کو صحتمند رکھنے میں بھی خربوزے کا استعمال بہت مفید ہے۔9۔ اس کو اگر دوپہر اور شام کے کھانے کے درمیانی وقفہ میں کھایا جائے ،تو بدن کو موٹا کرتا ہے اور فرحت بخشتا ہے۔10۔ اس کے چھلکوں کو رگڑ کر چہرے پر لیپ کرنے سے رنگ نکھر آتا ہے۔11۔ اس کے چھلکوں کا نمک درد گردہ کی دواؤں میں ڈالا جاتا ہے۔12۔ خربوزہ کے تخم پیشاب آور ادویہ میں استعمال کئے جاتے ہیں۔13۔ مغز تخم خربوزہ جگر کے ورم، گردہ و مثانہ کے ورم کو درست کرتے ہیں۔14۔ یرقان اور جلندر کو بے حد مفید ہوتا ہے۔15۔ مغز تخم خربوزہ طبیعت کو نرم کرتا ہے۔16۔ خربوزہ کے چھلکے کا آنکھوں پر ضماد، آنکھوں کی سرخی کو دور کرتا ہے۔17۔ خربوزہ بدن میں فاضل تیزابیت مادوں کو پیشاب اور پسینے کے راستے خارج کرتا ہے۔18۔ کھٹے ڈکار آتے ہوں، تیزابیت کی زیادتی کی وجہ سے منہ میں چھالے ہوں، سینے میں جلن ہوتی ہو تو خربوزہ کھانا انتہائی مفید ہوتا ہے۔19۔ خربوزے کا متواتر استعمال عام جسمانی کمزوری کو دور کرتا ہے۔20۔ یرقان، بلڈپریشر میں بہت فائدہ دیتا ہے۔21۔ عورتوں کے ایام میں کمی اور بے قاعدگی میں خربوزہ کا استعمال بے حد مفید ہوتا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں