Amjad Usmani

عجب خواب تھا خوابوں کے زمانے میں لے گیا

عجب خواب تھا خوابوں کے زمانے میں لے گیا

عجب خواب تھا کہ ماضی کے دریچے”وا”کر گیا۔۔۔۔کئی دہائیوں پیچھے خوابوں کے” سہانے زمانے” میں لے گیا۔۔۔کوئی “تعبیرگو”ملے تو اس کی تعبیر پوچھوں۔۔۔۔۔۔۔والدین کی طرح استاد شاگرد کا رشتہ بھی “اٹوٹ انگ “ہوتا ہے۔۔۔۔۔اساتذہ ہمیشہ اساتذہ کرام ہی رہتے ہیں۔۔۔۔۔۔میٹرک کے استاد گرامی جناب لطیف ابرار کل سہ پہر خواب میں ملے۔۔۔۔کتنا ہی دلکش منظر تھا۔۔۔۔۔۔کلاس لگی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔ذرا تاخیر سے سہما سہما سا کلاس میں پہنچتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔وہ اپنے مخصوص انداز میں کسی کو کوئی بات سمجھا رہے تھے۔۔۔۔مجھے دیکھتے ہی نرم لہجے میں کہا امجد بیٹھ جائو۔۔۔۔۔میں نظریں جھکائے ادب کے ساتھ ان کے قدموں میں بیٹھ گیا۔۔۔۔۔۔۔میری خوش بختی کہ میں نے والدین کے بعد سب سے زیادہ احترام اساتذہ کرام کا کیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسی طرح علمائے کرام کا بھی۔۔۔۔۔۔۔جیسے والدین بچپن میں بچے کی انگلی پکڑے اسے چلنا سکھاتے اسی طرح ابتدائی اساتذہ کرام اسے قلم تھمائے “حروف آشنا” کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔دماغ کی تختی پر نقش یہ گھٹنوں بل چلنے کا زمانہ کب بھولتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری یہ بھی خوش قسمتی ہے کہ میں اب بھی مڈل کلاس کے اساتذہ سے دعائیں لیتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔گورنمنٹ مڈل سکول گڈگور پسرور میں ساتویں جماعت کے دانشور استاد جناب ابن آدم پسروری۔۔۔۔۔۔جناب جاوید اقبال سیال اور آثھویں جماعت کے استاد جناب ریاست علی باجوہ سے نیاز مندی چل رہی ہے۔۔۔۔۔یہ وہ تینوں اساتذہ کرام ہیں جنہوں نے مڈل کلاس کے بورڈ امتحانات میں مجھے ضلع سیالکوٹ کا “ٹاپر” بنوایا۔۔۔۔۔۔۔حسن اتفاق دیکھیے کہ اس سے پہلے گورنمنٹ پرائمری سکول قادر آباد منڈیالہ میں جاوید اقبال صاحب کے والد گرامی جناب اللہ دتہ بھی میرے استاد تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہاں جناب مشتاق احمد اور جناب شفیق احمد کی نگرانی میں۔۔۔میں نے تحصیل پسرور میں پہلی پوزیشن لی۔۔۔۔یہ انیس سو اٹھاسی کی بات ہے۔۔۔۔۔۔انیس سو اکانوے میں مڈل کے بعد میں نے میٹرک کے لیے گورنمنٹ ہائی سکول شکرگرھ میں داخلہ لیا تو وہاں “بی سیکشن” میں جناب لطیف ابرار میرے کلاس ٹیچر ٹھہرے۔۔۔۔وہ اپنے وقت میں شکرگڑھ کے بہترین استاد تھے۔۔۔۔۔با وقار ۔۔۔۔۔۔۔با کردار۔۔۔اور وضع دار۔۔۔۔۔۔۔۔زہے نصیب کہ استاد ہی نہیں وہ زندگی بھر کے لیے مرشد بن گئے۔۔۔۔۔۔۔۔میں نے ان کی انگلی پکڑ لی اور انہوں نے مجھے تھام لیا۔۔۔۔۔۔۔ان سے ملکر مجھ پر روحانی باپ کا مفہوم کھلا۔۔۔۔۔۔۔وہ مجھ سے دو وجوہات کے باعث پیار کرتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔ایک تو میں آٹھویں کا سکالرشپ ہولڈر تھا۔۔۔۔۔دوسری بات کہ ان کی پہلی تقرری چونڈہ میں ہوئی تھی۔۔۔۔اور میرا مڈل سکول گڈگور چونڈہ کے علاقے میں ہی آتا تھا۔۔۔۔۔۔یہاں یہ بات قابل ذکر ہے میرا پانچویں جماعت کا سکالرشپ اس وقت کے پسرور کے ایجوکیشن افسر جناب تاج دین “کھا” گئے تھے ۔۔۔۔۔جس کا مطلب ہے کہ پاکستان میں کرپشن کوئی نئی چیز نہیں ۔۔۔۔۔ماسٹر مشتاق اور میرے ابا مرحوم نے وظیفہ کی” بازیابی” کے لیے بڑی تگ و دو کی مگر دال نہ گلی۔۔۔۔۔مشتاق صاحب بتایا کرتے کہ تاج دین صاحب نے بعد میں اعتراف جرم کرکے معافی مانگ لی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔اللہ ان کی بخشش فرمائے کہ بہرکیف وہ بھی استاد تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے دیکھ کر جناب لطیف ابرار کو “پہلی محبت کی طرح” چونڈہ یاد آجاتا اور وہ اپنی خوشگوار یادیں شئیر کرتے۔۔۔۔۔ویسے چونڈہ ہے بھی قابل ذکر کہ پینسٹھ کی پاک بھارت جنگ میں اس محاذ پر پاک فوج کے شیر دل جوانوں نے تاریخ رقم کی تھی۔۔۔۔عساکر پاکستان کے یہ وہ شہدائے کرام ہیں جنہوں نے دشمن کے ٹینکوں کے سامنے لیٹ کر ان کے پرخچے اڑا دیے اور “بھارتی چوہے” اپنے ٹینک چھوڑ کر دم دبائے بھاگنے پر مجبور ہو گئے۔۔۔۔جناب لطیف ابرار گورنمنٹ ہائی سکول شکرگرھ کے انتہائی بارعب مگر شفیق استاد تھے۔۔۔۔۔سکولوں میں نوے کی دہائی ڈنڈے کا زمانہ تھا لیکن وہ تب بھی مار نہیں پیار کے علم بردار تھے ۔۔۔انہوں نے پورے تعلیمی کیریئر میں ٹیوشن پڑھائی نہ “سٹک” استعمال کی۔۔۔۔۔۔میری خوش قسمتی کہ میں ان کی توجہ میں آگیا جیسے اللہ والے بندے پر توجہ کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔تب سے اب تک یہ توجہ چل رہی ہے۔۔۔۔۔۔انہوں نے دو سال قدم قدم میری رہنمائی کی۔۔۔۔۔۔انہیں احساس تھا کہ میں ماں باپ سے دور “مہاجر بچہ” ہوں۔۔۔۔۔وہ مجھ سے علیحدگی میں پوچھتے بیٹے کوئی مسئلہ تو نہیں۔۔۔مجھے نہیں یاد انہوں نے کبھی ڈانٹا ہو۔۔۔۔۔ہاں وہ احساس دلاتے جیسے کوئی اللہ والا اشارے کنائے میں رہنمائی کرتا ہے۔۔۔۔۔۔وہ مجھ میں ایک” ڈاکٹر “دیکھتے تھے مگر میں ساتویں کلاس میں ہی صحافی بننے کا خواب دیکھ بیٹھا تھا۔۔۔۔۔۔وہ میری خوش خطی کے شیدائی تھے۔۔۔۔وہ میرے ساتھ نیچے ہی بیٹھ کر مجھ سے سکول تقریبات کے سپاس نامے لکھواتے۔۔۔۔۔وہ مجھے ترغیب دینے کے لیے بتاتے کہ شکرگرھ کے جناب ڈاکٹر داؤد بھی بڑے ہی خوش خط تھے اور انہوں نے سٹریٹ لائٹس میں بیٹھ کر پڑھا اور ڈاکٹر بنے۔۔۔۔۔۔۔۔حسن اتفاق دیکھیے کہ گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج شکرگرھ میں ہمارے ایف ایس سی میں بیالوجی کے دو استاد جناب پروفیسر مقصود اور پروفیسر مسعود انہی ڈاکٹر مسعود کے بھائی تھے۔۔۔۔۔پروفیسر مقصود صاحب بھی کمال استاد تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔زوالوجی کے پروفیسر تھے مگر حسب ضرورت انگریزی۔۔۔۔۔۔۔کیمسٹری اور فزکس بھی پڑھاتے اور خوب پڑھاتے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کالج کے نوٹس اور ڈیٹ شیٹ بھی وہی لکھتے۔۔۔۔۔۔یوں لگتا کسی بڑے کاتب نے موتی پروئے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔میٹرک کے بعد کالج۔۔۔۔یونیورسٹی دیکھ لی۔۔۔۔۔۔صحافت میں بائیس سال بھی ہو گئے لیکن آج بھی لگتا ہے لطیف ابرار صاحب کے قدموں میں بیٹھا ہوں۔۔۔۔۔میٹرک کے بعد تو ان کا گھر میرے لیے مرشد خانہ بن گیا۔۔۔۔۔۔جب موقع ملتا میں ان کے پاس جا بیٹھتا اور ان سے مستفیض ہوتا۔۔۔۔۔ وہ میری شادی پر مہمان خاص تھے۔۔۔۔وہ میرے نکاح کے گواہ بھی بنے۔۔۔۔۔وہ شہر کے “مولوی صاحب” کی اتنی قدر کرتے تھے کہ نکاح پر مجھے کہا کہ “حضرت صاحب” کو ہزار روپے دے دیں۔۔۔۔۔یہ دو ہزار تین کی بات ہے۔۔۔۔۔۔۔لیکن” ایسے وقت” کب کسی کو یاد رہتے ہیں۔۔۔۔۔میں امی ابا کے بعد سب سے زیادہ ان کی مجلس میں بیٹھا ہوں۔۔۔۔۔۔انہوں نے تنخواہ پر گذر بسر کی اور چھ بچے پڑھائے ۔۔۔۔۔میں نے ان کے گھر برکتیں بارش کی طرح برستی دیکھی ہیں۔۔۔کسی استاد کا اتنا دسترخوان نہیں دیکھا۔۔۔۔۔۔جب بھی ان کے ہاں جانا ہوا۔۔۔اس اہتمام کے ساتھ مدارت کرتے کہ جیسے کوئی مدت سے بچھڑا بیٹا گھر آیا ہے۔۔۔۔۔۔۔اتنا کچھ تیار کر لیتے کہ بعد میں۔۔۔میں نے ایک” گرائنڈر مین” کو ساتھ لے جانا شروع کردیا کہ بھلا اکیلا بندہ اتنا کچھ کیسے کھائے۔۔۔۔؟؟؟لطیف صاحب خوش قسمت ہیں کہ ان کے پانچوں بیٹے اور اکلوتی بیٹی اعلی تعلیم یافتہ ہیں۔۔۔۔عظیم اور احسان ڈاکٹر بن گئے۔۔۔۔۔بیٹی ایم اے لائبریرین سائنس۔۔۔۔سلیم ابرار ایم بی اے۔۔۔۔ابوبکر اور سعد بھی مختلف مضامین ماسٹرز ہیں۔۔۔۔یہاں ایک لطیفہ بھی سن لیجیے کہ ڈاکٹر عظیم ان کے وہ عظیم صاحبزادے ہیں کہ جو کیوبا میں میڈیکل کی مفت تعلیم اس لیے چھوڑ آئے کہ وہاں چاول نہیں ملتے۔۔۔۔۔چاولوں سے محبت کی ایسی مثال شاید کسی خطے میں ملے۔۔۔۔۔۔۔پھر انہوں نے راولپنڈی میڈیکل کالج میں داخلہ لیا اور ڈاکٹر بنے۔۔۔۔۔۔۔میرے مقدر کہ میں استاد گرامی لطیف صاحب کی خوشی غمی میں شریک رہا۔۔۔۔۔۔۔ان کی اکلوتی صاحبزادی اور چار بیٹوں کی شادی کی خوشیاں منائیں۔۔۔۔۔ان کی والدہ کی وفات پر ان کا دکھ بانٹا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کسی شاگرد کے لیے اس سے بڑھ کر شاید ہی کوئی سعادت ہو سکتی ہے۔۔۔۔۔۔۔چند سال ہوئے جناب لطیف صاحب بچوں کے ساتھ راولپنڈی منتقل ہو گئے ہیں۔۔۔۔۔۔۔شکرگرھ کے “برائے نام” ریلوے روڈ پر نیشنل بینک والی گلی کوئی پچیس سال میری “روحانی منزل” رہی ۔۔۔۔۔۔۔۔یہ ادب گاہ تھی جہاں قدم رک جاتے اور سر جھک جاتا تھا ۔۔۔۔۔۔یہاں سے کئی سال درود شریف سے مہکتا متبرک کیک مجھے ملتا رہا۔۔۔۔۔اب کبھی ادھر سے گذر ہو تو دل سے ایک ہوک سی نکلتی اور آنکھیں چھلک پڑتی ہیں ۔۔۔۔۔سوچتا ہوں کہ لوگ ایک “مکان”کو روتے رہ جاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔انس والے لوگ ہجرت کر جائیں تو عالی شان گھر اور پوش گلی محلے بھی کتنے غیر مانوس ہو جاتے ہیں ۔۔۔۔۔گلی محلے کیا شہر اور ملک غیر متعلق ہو جاتے ہیں۔۔۔۔۔استاد گرامی قدر کے کچھ دکھ مجھے دکھی کر جاتے اور میں گاہے رو بھی دیتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوچتا ہوں کہ ہم بھی کیسے اذیت پسند معاشرے کے کتنے بد بخت لوگ ہیں کہ اپنے خیر خواہوں کے ہی بدخواہ بن جاتے ہیں۔۔۔۔۔۔جناب افتخار عارف نے سچ ہی کہا تھا

پیمبروں سے زمینیں وفا نہیں کرتیں
ہم ایسے کون خدا تھے کہ اپنے گھر رہتے

اپنا تبصرہ بھیجیں