ڈاکٹر ولاء جمال العسیلی

خواتين كا عالمى دن اور مصرى خاتون (مصری خاتون کا دن)

ڈاکٹر ولاء جمال العسیلی
ایسوسی ایٹ پروفیسر
اردو شعبہ، عین شمس یونیورسٹی
قاہرہ، مصر

دنیا ہر سال یعنی 8 مارچ ميں خواتین کا عالمی دن منا رہی ہے، اور اس کا مقصد صنفی مساوات کو حاصل کرنا، مختلف شعبوں میں خواتین کو بااختیار بنانا، ان کے خوابوں ، ان کی تمنائوں اور آرزوئوں کو پورا کرنے کے لیے ان کی حوصلہ افزائی کرنا ، دنیا بھرکے معاشروں کو خواتین کے مضبوط اور بااثر حالات کی یاد دلانا، ان کی کامیابیوں کا جشن منانا، خواتین کے مسائل پر توجہ دے کر صنفی مساوات کی حمایت کرنا اور خواتین کے موثر اور بااثر کردار کو اجاگر کرنا ہے-

ہم خواتین کی بہت سی کامیاب مثالیں دیکھتے ہیں جنھوں نے تعصب اور تفریق کےدقیانوسی تصورات کو توڑاہے- تمام معاملات بالخصوص اپنے حقوق حاصل کرنے کے لئے انہوں نے جو جہد وجہد کی ہے وہ قابل تعریف ہے۔ کام کرنے کا حق، تعلیم، صحت، معاشی برابری کی جیسے شعبوں میں ہم دیکھ سکتے ہيں کہ ان کا عزم اور ان کا کردار کمال کا ہے-

مصر کی تاریخ مختلف شعبوں میں خواتین کے حیرت انگیزکار ناموں سے بھری پڑی ہے۔ عہدقدیم اور قرون وسطی سے لے کر جدید دور تک ، مصرکےمعاشرے میں خواتین کے کامیاب ماڈلز بہت ہیں- بہت سی با صلاحیت مصری خواتین نے کئی شعبوں میں نمایاں اور باوقار کامیابیاں حاصل کی ہیں۔ہم نے دیکھا ہے کہ جیسے ہی انہیں مواقع میسر آئے، انہوں نے اپنے پورےحوصلے اور نہ ختم ہونے والے عزم کے ساتھ اپنی موجودگی کا ثبوت دیا اور مقامی اور بین الاقوامی سطح تعلیم، صحافت، سیاست، ہوا بازی، سائنسی تحقیق وغيرہ کے شعبوں میں دھوم مچا دی۔

8 مارچ کو عالمی یوم خواتین کے ساتھ ساتھ مصر میں ہر سال 16 مارچ کو مصری خواتین کا دن منایا جاتا ہے۔اس تاریخ کا انتخاب خاص طور پر اس وجہ سے کیا گیا ہے کہ یہ مختلف تاریخی مراحل میں مصری خواتین کی زندگی میں اہم مقامات کی یاد رکھتی ہے، جن میں نوآبادیات کے خلاف ان کی بغاوت ، آزادی کے لئے ان کی جدوجہد اور ان کے دو اہم ترین سیاسی حقوق حاصل کرنے کی یاد ہے۔ یہ یوم شہادت ان شہداؤں کی تاریخ ہے جو 100 سال قبل انگریزوں کے قبضے کے خلاف لڑائی میں شہید ہوئیں۔ مصری یوم خواتین کی تاریخ 16 مارچ 1919 کو شروع ہوئی جب خواتین نے جدید مصر کی تاریخ میں پہلی بار انگریزی قبضے کے خلاف سڑکوں پر احتجاج کیا۔ اس کی شروعات حقوق پرست رہنما مسز ہدی شعراوی کی جانب سے اس دن انگریز قبضے کے خلاف خواتین کے مظاہرے کی دعوت سے ہوئی، انہوں نے خواتین کے ایک ایسے مظاہرے کی قیادت کی جسے اپنی نوعیت کا پہلا مظاہرہ سمجھا جاتا تھا، جس میں 300 سے زائد مصری خواتین نے شرکت کی۔ مظاہروں کے دوران کچھ خواتین “وطن کی شہید” بن گئیں، اور اس دن سے لڑائی مصری خواتین کے اپنے حقوق اور اپنے ملک کے حقوق کے دفاع کے پیغام کا حصہ بن گئی۔ اس مظاہرے کے ذریعہ انھوں نے پہلی مصری فیڈریشن برائے خواتین کے قیام ، خواتین کے تعلیمی معیار کو بہتر بنانے اور سماجی و سیاسی مساوات کو یقینی بنانے کا مطالبہ کیا-

16 مارچ 1923 کو، ہدي شعراوی نے مصر میں پہلی خواتین یونین کے قیام کا مطالبہ کیا، جس کا مقصد خواتین کو ان کے سیاسی اور معاشرتی حقوق حاصل کرنا اور مرد کے ساتھ مساوات حاصل کرنا تھا، نہ صرف یہ، بلکہ لڑکیوں کو یونیورسٹی تک تمام مراحل میں عوامی تعلیم حاصل کرنے اور شادی سے متعلق قوانین میں اصلاحات کی ضرورت پر زور دیا.انہوں نے قانون سے مطالبہ کیا کہ وہ شادی، تعلیم اور سیاسی حقوق کے استعمال سے متعلق مصر کے قوانین کو تبدیل کرے۔ 16 مارچ کا یہ واحد متاثر کن واقعہ نہیں تھا، جس کا مرکزی کردار مصری خاتون تھیں- 16 مارچ 1928 کو پہلی لڑکیوں کا گروپ قاہرہ یونیورسٹی میں داخل ہوا۔ کئی خواتین نے تعلیم اور عوامی ملازمت کے حق کو یقینی بنانے کے لئے پیشہ ورانہ شعبوں میں کامیابی حاصل کی ہے۔ پہلی مصری خاتون نے لیسٹر آف رائٹس کی ڈگری حاصل کی، اور پہلی مصری اور عرب وکیل کی حیثیت سے منیرہ کا نام 1924 میں مخلوط عدالتوں کے سامنے وکلاء کی فہرست میں درج کیا گیا۔ ہیلینا سیڈاروس نے طب کے میدان میں کامیابی حاصل کی اور پہلی مصری ڈاکٹر بن گئی۔خواتین نے سماجی انصاف پر اصرار کیا اور سائنسی طور پر اعلی درجے حاصل کئے- 16 مارچ 1956 کو مصری خواتین پارلیمنٹ کی رکن بن گئیں مصرى آئین نے انہیں امیدوار بننے کی اجازت دی تھی اور انہیں پارلیمنٹ کے انتخابات میں ووٹ ڈالنے کا حق بھی دیا تھا۔

آج، سو سال اور اس سے زیادہ عرصے کے بعد، مصری عورت تمام شعبوں میں اپنی صلاحیت، قابلیت کی بنیاد پر حقیقی طور پر بااختیار بننے کا ثمر حاصل کر رہی ہے۔ مصری خواتین اب ایسے اہم عہدوں پر فائز ہو رہی ہیں جو پہلے انھیں میسر نہیں تھے۔ آج کی مصری خاتون کی کامیابی کی يہ علامت ہے کہ خواتین کی رسائی ججوں کے پلیٹ فارم تک ہو چکی ہے ۔ خواتین کچھ دن قبل ہی عدلیہ کے اس مسند تک پہنچ گئیں جو اب تک صرف مردوں کے لئے مخصوص تھی۔ مصرکی تاریخ میں پہلی بار، 5 مارچ کو جج رضوی حلمی مسند عدالت پر بیٹھیں۔ مصرکی عورت کو اس کاميابی کی سہرا “”اومنیہ جاد اللہ” کے سر باندھا جاناچاہیئے جنہوں نے قانون کی فیکلٹی سے گریجویشن کیا اور بعد میں قانون میں ماسٹر ڈگری بھی حاصل کی ہے۔انھوں نے The Platform is Her Right کی شروعات بھی کی اور انسانی حقوق کے بارے میں آگاہی پیدا کرنے ، لڑکیوں کی حمایت کرنے اور مصری خواتین کی عدلیہ تک رسائی سے روکے جانےکے معاملوں کے حوالے سے امتیازی سلوک کا مقابلہ کرنے کے سلسلے میں بیداری پیدا کی۔ وہ خواتین کے اعلی منصب پر پہنچنے کی پرزور وکالت کرتی رہی ہیں۔ عدالتوں میں خاص طور پر اور معاشرے اور عمومی طور پر خواتین کی ترقی کے معاملوں پر وہ بے حد یقین رکھتی ہیں۔ انھوں نے خواتین کے پسماندہ رہنے اور ریاستی کونسل کے اندر ان کے حقوق دبائے جانے کے معاملات کو پوری طرح مسترد کیاہے ۔ جب کونسل نے ایک خاتون کا بحیثیت جج تقرر کرنے سے انکار کیا تو امنیہ نے ریاستی کونسل میں بطور معاون مندوب مقرر ہونے کی اپنی اہلیت کے حوالے سے ایک مقدمہ دائر کیا۔جس میں ان کا دعوی تھا کہ تقرری اور ملازمت کی شرائط کے مطابق انھیں بھی ریاستی کونسل میں عدلیہ کے پوڈیم تک پہنچنے کا موقع ملنا چاہیئے۔” جد اللہ” نے خواتین کی عدلیہ تک رسائی کے حق کے دفاع کے لیے اپنی مہم جاری رکھی، یہاں تک کہ صدر جمہوریہ نے فیصلہ جاری کر دیا اور اب ریاستی کونسل میں 98 خواتین ججز اپنے ساتھی ججوں کے ساتھ بنچ پر بیٹھنے کی حقدار ہوگئی ہیں-

مصر میں ہم دیکھ سکتے ہیں کہ اس وقت یہاں ایک خاتون وزیر سیاحت ہے۔ اب تک یہ عہدہ روایتی طور پر مردوں کے ماتحت اوران کی بالادستی میں رہا ہے۔قابل ذکر بات یہ ہے کہ ایک خاتون کی قیادت میں اس شعبہ نے بہت زیادہ کامیابیاں حاصل کی ہیں انھوں نے یہ ثابت کردیا ہے کہ خواتین دنیا میں تبدیلی لانے کی صلاحیت رکھتی ہیں۔انھوں نے داخلی اور خارجی طور پر مصر کی بہترین نمائندگی کرکے دنیا پر یہ ثابت کر دیا کہ کوئی بھی چیز ناممکن نہیں ہے۔ انھوں نے تعصب کے سانچے کو توڑنے میں کامیابی حاصل کی اور اس عہدے پر کام کرکے 2019 میں مصر کی تاریخ میں سیاحت سے ہونے والی آمدنی کے پرانے ریکارڈ توڑ دئے-

ان کےعلاوہ بہت سی ایسی شاندار مصری خواتین ہیں جو اپنی پیشہ ورانہ اور ذاتی کامیابیوں کے ذریعے ہر روز صنفی اور جنسی تعصبات کو توڑرہی ہیں۔ مصری سینیٹ(پارلیمنٹ) میں خواتین کی غیر معمولی موجودگی کے علاوہ سرکاری ملازمتوں میں خواتین کی شرح 45 فیصد تک پہنچ گئی ہے،حکومت میں خاتون وزراء کا تناسب 25 فیصد تک پہنچ گیا یعنی وزراء کا ایک چوتھائی حصہ خواتین پر مشتمل ہے ۔ گذشتہ کئی برس کے دوران مختلف ریاستی اداروں میں خواتین نے کی نمائندگی میں قابل ذکر اضافہ ہوا ہے۔ خواتین نے پہلی بار قومی کونسل برائے انسانی حقوق کی صدارت حاصل کی ،ریاستی کونسل اور انتظامی پراسیکیوشن میں بھی ان کو اپنی کارکردگی دکھانے کا موقع ملا۔ مرکزی بینک کی پہلی ڈپٹی سربراہ، ڈپٹی گورنر،صدر جمہوریہ کی مشیر برائے قومی سلامتی اور اقتصادی عدالت کی پہلی خاتون صدر ہونے کا شرف بھی مصری خواتین کا حاصل ہو چکا ہے-

يہ بھی نہيں بھولنا چاہیئے کہ بعض سیاست دانوں نے خواتین کے ساتھ تفریق اور سوتیلے برتائو کے خلاف چل رہی خواتین کی تحریکوں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا اور ان کی حقوق کی بازیابی کی راہ ہموار کرنے میں مدد کی ہے،انھوں نے خواتین کو بااختیار بنانے کے لیے کام کیا ہےاور مختلف شعبوں میں عورت کی صلاحیتوں کا کھل کر اعتراف کیا-

آ خر میں، میں یہ کہنا چاہتی ہوں کہ وہ تعصب اور تفریق جو عورت کی ترقی اور اس کے آگے بڑھنے کو مشکل بنا ئے اس کو مٹادینا چاہیے، چاہے یہ تعصب اور تفریق جان بوجھ کر ہو یا انجانے میں۔ تعصب و تفریق کو توڑنے کے لیے، معاشرے کو سب سے پہلے یہ تسلیم کرنا چاہیے کہ یہ ناروا سلوک ہے۔ ميرے خيال میں خواتین کے ساتھ اختیار کئے جانے والا تعصب ایک سماجی مسئلہ ہونے سے پہلے ایک خاندانی مسئلہ ہے۔ سچ بات تو یہ ہے کہ خواتین کے خلاف تعصب سب سے پہلے کنبے اور خاندان سے شروع ہوتا ہے۔در اصل تعصب اور تفریق کا رواج بہت سے خاندانوں میں فطری معلوم پڑتاہے کیونکہ اخلاقی اور روایتی لحاظ سے نسلوں کو یہ تعصب وراثت میں ملتا ہے۔ اس کو ہمارے بچوں، مردوں اور عورتوں کی طرف سے بڑھایا جاتا ہے، اسی بنیاد پر میں کہنا چاہوں گی کہ اس تعصب کو ختم کرنا صرف قانون سازی سے مکمل نہیں ہوسکتا بلکہ اس کے لئے گھروں، دفتروں ، کارخانوں ، اسکولوں، کالجوں، یونیورسٹیوں اور ہمارے آس پاس کی جگہوں پر بیداری پیدا کرنا ہوگی تاکہ اس صنفی اور جنسی تفریق و تعصب کا خاتمہ ہو۔ اس بات سے کوئی انکار نہیں کر سکتاکہ عورت اور مرد مل کر ایک محفوظ اور مستحکم معاشرہ بناتے ہیں۔

اس بات سے بھی کوئی انکار نہیں کرسکتا کہ عورت معاشرے کا نصف حصہ ہے، وہی خوشی کا منبہ ہے، اپنے اردگرد رہنے والوں کے لیے طاقت اور توانائی کی بنیاد ہے، اپنے شوہر اور بچوں کے لیے نرمی اور محبت کا سر چشمہ ہے۔ وہ ماں ہے، بیوی ہے، بیٹی ہے اور بہن ہے۔ اسلام عورت کو ممتاز کرنے اور اسے اپنے خاندان میں ایک خاص مقام دینے کا خواہاں ہے۔ ایام جاہلیت میں بھی اسلام نے قبیلوں کے غیر انسانی رسم و رواج کو بدل کر لڑکیوں سے محبت کرنے کا حکم دیا، جومعاشرہ لڑکیوں کوحقارت کی نظر سے دیکھتا تھا اس کو۔ رسول اللہ ﷺنے حکم دیا کہ عورتوں کے ساتھ حسن سلوک کرنے کی میری وصیت قبول کرو- اللہ تعالی نے بھی قرآن کریم میں ارشاد فرمایا ہے: “اَنِّیْ لَاۤ اُضِیْعُ عَمَلَ عَامِلٍ مِّنْكُمْ مِّنْ ذَكَرٍ اَوْ اُنْثٰى-بَعْضُكُمْ مِّنْ بَعْضٍ”- ترجمہ: “میں تم میں سے عمل کرنے والوں کے عمل کو ضائع نہیں کروں گا وہ مرد ہو یا عورت ۔تم آپس میں ایک ہی ہو”- “مَن عَمِلَ صَالِحًا مِّن ذَكَرٍ اَو اُنثٰى وَهُوَ مُؤمِنٌ فَلَنُحيِيَنَّهٗ حَيٰوةً طَيِّبَةً‌ وَلَنَجزِيَنَّهُم اَجرَهُم بِاَحسَنِ مَا كَانُوا يَعمَلُونَ”- ترجمہ: جس نے نیک کام کیے خواہ وہ مرد ہو یا عورت بشرطیکہ وہ مومن ہو تو ہم اس کو پاکیزہ زندگی کے ساتھ ضرور زندہ رکھیں گے، اور ہم ان کو ان کے نیک کاموں کی ضرور جزا دیں گے-

آخر میں ہراس خاتون کو میں سلام پیش کرتی ہوں، جس نے ہمیشہ اس بات کو ثابت کیا ہے کہ وہ ترقی اور تعمیر میں قوم کی ڈھال اور تلوار ہے-

4 تبصرے “خواتين كا عالمى دن اور مصرى خاتون (مصری خاتون کا دن)

  1. Hello there! Do you know if they make any plugins to help with SEO? I’m trying to get my blog to rank for some targeted keywords but I’m not seeing very good gains. If you know of any please share. Kudos! You can read similar blog here: Dobry sklep

اپنا تبصرہ بھیجیں