Hassan Kazmi

حسن کاظمی

کیا پرانے ہوئے زمانے سب
ڈھونڈتے ہیں نئے ٹھکانے سب

بجلیوں نے لگائی ایسی آگ
جل گئے اپنے آشیانے سب

خوب جمتی ہے محفل ِ یاراں
دوست مِلتے ہیں جب پرانے سب

بات کچھ بھی نہیں ہوئی ایسی
جی جلانے کے ہیں بہانے سب

تھے حسن اُس کی یاد کے کاغذ
کیوں لگے آج خط جلانے سب

اپنا تبصرہ بھیجیں