Professor Abdullah Bhatti

ادھار بکرے

جانباز جانی بہت دنوں بعد مُجھ سے ملنے آیا تھا زندگی کی تمام رعنا ئیوں سے بھرا ہوا پر جوش انسان ہر مسئلے کا حل نکالنا اُس کے بائیں ہاتھ کا کام ہو تا ہے زبان کا بہت تیز باتونی کسی انشورنس کمپنی میں چھوٹے درجے کا ملازم ہرو قت پینٹ شرٹ ٹائی میں ملبوس دوست یار قسمیں کھاتے تھے جکہ ہم جانی کو کبھی پینٹ شرٹ ٹائی کے بغیر نہیں دیکھا بلکہ اکثر اُس سے سوال کرتے کہ جانی تم سوتے وقت ٹائی اتارتے ہو یا نہیں تو وہ مسکرا دیتا کسی دوست کے ریفرنس سے میرے پاس آیا کہ آپ بیمہ کرالو جب میں نے انکار کیا تو نئی آفر لے کر آگیا کہ سر آپ کے پاس رنگ رنگ کے امیر دولت مند طاقتور لوگ آتے ہیں اُن تک مجھے ریفر کر یں جب میں نے یہاں بھی انکار کیا تو نئی آفر کر دی کہ آپ کے کسی بھی دوست کی انشورنس اگر کروں گا تو آپ کا کمیشن بھی رکھوں گا میں نے یہاں بھی انکار کیا لیکن یہ ہمت ہارنے والا نہیں ہر بار خود بھی کروڑ پتی بن جاتا مجھے بھی کروڑوں کی آفر کراتا کہ آپ گھر بیٹھے کچھ بھی کئے بغیر لاکھوں روپے ماہانہ بنیاد پر کمانا شروع کر دیں گے آپ نے کسی بندے کے پاس بھی نہیں جانا نہ ہی کہنا ہے بلکہ صرف مُجھ دولت مندوں کے سامنے بٹھا دینا اُن کو کیسے بچوڑنا ہے یہ کام میں اچھی طرح جانتا ہوں جانی ایک شاطر تیز دماغ ذہین آدمی تھا اِس کو شہر بلکہ وطن عزیز کے تمام بہت سارے سرکاری افسران کا پتہ ہو تا کون کس جگہ کس پوسٹ پر کس کا حالیہ تبادلہ ہوا ہے کون کرپشن میں پکڑا گیا کون کس کا رشتہ دار ہے اِس کے ساتھ ساتھ شہر میںکون سی چیز کپڑا جوتے وغیرہ سستے اچھے کہاں سے ملتے ہیں لنڈا بازار کہاں کہاں سے لگتا ہے شرٹ ٹائی پینٹ جوتے سوئیٹر جرسیاں وغیرہ ہمیشہ لنڈے کے خوبصورت مضبوط کپڑے زیر استعمال لاتا ہے مجھے ملتا تو میں شرارتاً پوچھتا یہ شرٹ ٹائی پینٹ کوٹ کہاں سے لیے ہیں تو اِس کی ڈکشنری سٹارٹ ہو جاتی یہ اول سے آخر ساری کہانی سنا کر دم لیتا لنڈا یاترا کے دوران کن کن افسران کو یہ وہاں دیکھتا ہے ان کے بارے میں بھی وسیع معلومات اِس کے دماغی کمپیوٹر میں موجود ہیں کس کی بیوی کون سی لڑائی ‘کون دوسری شادی یا کسی معاشقے میں پڑا ہے اِس کی انگلیوں پر موجود ہوتا ہے میں حیران ہوتا تھا اتنا ذہین ہونے کے باوجود یہ ابھی تک غربت کی زندگی کیوں گزار رہا ہے تو جواب یہی ملتا کہ تقدیر نصیب کا ذہانت تیزی طرابی سے کوئی تعلق واسطہ نہیں ہے اپنی شاطرانہ ذہانت اور گفتگو کے آرٹ سے یہ معاشرے کے اونچے طبقے میں بھی اٹھتا بیٹھتا تھا میرے پاس جب بھی آتا معلومات کا خزانہ لے کر آتا سفید پوش تھا میں جہاں تک ہوتا مدد بھی کرتا میں شاید کرہ ارضی کا اکلوتا شخص تھا جس کے سامنے اِس نے اپنی غربت کا پردہ چاک کیا تھا نہیں تو ایسے کپڑوں اور پالش شدہ چمکتے جوتوں اور الفاظ کی جادوگری سے اپنے محلے اور دوستوں میں کھاتا پیتا شخص مشہور تھا ہر وقت سینکڑوں منصوبے اِس کے دماغ میں ابل رہے ہوتے ہیں جن کے بارے میں یہ اِس خوش گمانی میں مبتلا رہتا ہے کہ وہ دن دور نہیں جب اِس کا خیال منصوبہ عملی طور پر پروان چڑھے گا اور یہ کروڑ پتی سے ارب پتی لوگوں کی صف میں نعرے مار رہا ہوگا میرے پاس آنے کی ایک وجہ وہ کرشمہ ساز دعا بھی تھی جس کے یہ انتظار میں تھا کہ جس دن مجھے دعا لگ گئی میں اُسی دن غربت کے جہنم سے نکل کر بہشت کے سبزہ زار میں کامیابی کے ساتویں آسمان پر پرواز کرتا نظر آئوں ۔اپنی انہی خوبیوں کی وجہ سے یہ میرے پسندیدہ ترین کرداروں میں سے تھا پتلا خاک کا مطالعہ میرا ہر دور میں پسندیدہ ترین مشغلہ ہے اُس کو دیکھنا اِس کی گفتگو چہرہ آنکھوں کے تاثرات چالاکیاں پھرتیاں تیزیاں نیکیاں حضرت انسان کے کیسے کیسے رنگ اور قدرت نے کیسی پراسرار مشین بنائی ہے جس نے عالم کو ہزار وں سالوں سے حیران پریشان کرکے رکھا ہوا ہے جانی بھی ایسا ہی کردار جس نے اپنی ذہانت چالاکی لباس گفتگو کے آرٹ سے خود کو معاشرے کا کامیاب فرد بنایا ہوا تھا صرف میں جانتا تھا کہ یہ کس طرح غربت کی چکی میں پس رہا ہے آج تو اِس کے کسی نئے روپ خیال کا منتظر تھا پھر یہی ہوا اُس نے جوبات کی اُس نے مجھے فریز کر کے رکھ دیا کچھ دیر تو ہمیشہ کی طرح ادھر اُدھر کی باتیں کرتا رہا میں دیکھ رہا تھا کہ اصل بات کچھ اور ہے جس کا میں منتظر تھا کہ کب اِس کے لبوں پر اصل بات آئے جب یہ پاکستان اور پاکستان کے کلچر پر خوب بول چکا تو میں بولا یار جانی بہت دیر ہو چکی کوئی بات ہے تو بتائو نہیں تو میں تھک گیا ہوں میرے بدلتے تیور دیکھ کر یہ پریشان ہوا اور بولا ٹھہریں مجھے آپ سے بہت ضروری کام ہے آپ وعدہ کریں کہ یہ میرا کام ضرور کریں گے میں بولا اگر میںاِس قابل ہوا تو ضرور کروں گا تو جانی بولا مجھے کسی سے ادھار دو بکرے لے دیں کیامیں حیرت سے اچھل پڑا قربانی کے بکرے وہ بھی ادھار یہ تم کیسی بات کر رہے ہو تو وہ دوبارہ بولا سر آپ کے امیردوست سینکڑوں بکروں کی قربانی کر تے ہیں ان سے دو بکرے عید سے تین دن پہلے ادھار لے دیں میں عید کے دن بکرے ذبح کر کے تھوڑا سا گوشت رکھ کر سارا گوشت اُن کے گھر دے دوں گا میں یہ کام ایک سرکاری افسر کے لیے برسوں سے کرتا آرہا ہوں اِس بار وہ حج پر گئے ہیں وہ اپنی قربانی وہاں کریں گے اس کی بات سن کر میں بولا اِس میں تمہار ا کیا فائدہ ہے تو وہ بولا میرے گھر میں بچے ہیں اور اہل محلہ اور رشتہ داروں کے سامنے اپنا بھرم رکھنے کے لیے میں آفیسر کے بکرے تین دن پہلے گھر لے آتا ہوں اچھے صحت مند بکرے تینوں دن گلی میں بچوں کے ساتھ لے کر بکروں کو سیر بھی کراتا ہوں اہل محلہ اور رشتہ داروں کو پتہ چل جاتا ہے عید والے دن قربانی کا سارا گوشت ان کے گھر دے آتا ہوں اعلان یہ کرتاہوں کہ میں سارا گوشت یتیم خانے دے آیا ہوں اِس طرح میری عزت کا بھرم بھی رہ جاتا ہے بچے بھی خوش ہو جاتے ہیں سر مہنگائی کا دیو اتنا طاقتور ہو گیا ہے کہ غریبوں کو کھا گیا ہے اب غریب تو دور کی بات سفید پوش تک قربانی نہیں کر سکتے لہذا مجھ جیسے سفید پوش اب ادھار کے بکروں سے اپنی عزت بچاتے ہیں اِس کے علاوہ میرے پاس کوئی چارہ نہیں ہے کیونکہ بکرے لنڈے بازار سے نہیں ملتے نہ ہی کو ئی سستا بازار ہے لہذا میںآفیسر کے بکرے لے آتا ہوں اُس کو چوری ہونے کا خطرہ بھی نہیں اور نہ ہی بکروں کی حفاظت اور پالنے کا خطرہ میں اُن کی پسند کا گوشت ان کے گھر دے آتا ہوں اِس طرح اُن کے قصائی کے پیسے بچ جا تے ہیں اور میری عزت بھی بچ جاتی ہے جانی اپنی اِس چالاکی کو مختلف دلیلوں وضاحتوں سے سچا ثابت کر نے کی کو شش کر رہا تھا مجھے جانی کے اندر کا کرب دکھ بھی محسوس ہو رہا تھا کہ کس طرح ہو شربا مہنگائی نے لوگوں سے عقل و شعور مذہبی اگاہی چھین لی ہے اور یہ لوگ اپنی عزت بچانے کے لیے مارے مارے ٹھوکریں کھاتے پھر رہے ہیں ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں